@Mussarat20 December 2023 at 01:42
جرنیلی سڑک. جی ٹی روڈ.. تاریخ کے آئینے میں.
سولہوویں صدی میں جب شیر شاہ سوری نے ہندوستان میں اپنی حکومت قائم کی تو اس کی ترجیحات میں 2500 کلومیٹر طویل قدیم سڑک جی ٹی روڈ کی تعمیرِ نو تھی، جو کابل سے لے کر کلکتہ تک پھیلی ہے، تاکہ سرکاری پیغام رسانی اور تجارت کو مؤثر اور تیز تر بنایا جائے۔اس سڑک کے بارے میں روایت ہے کہ اس کا پہلے نام جرنیلی سڑک تھا جو بعد میں انگریزوں کے دور حکمرانی میں بدل کر جی ٹی روڈ یعنی گرینڈ ٹرنک روڈ رکھا گیا۔ سینکڑوں سال قدیم اس سڑک کا گزر کابل سے ہوتا ہوا پہلے لاہور پھر دہلی سے ہو کر بالآخر کلکتہ جا کر ختم ہوتا ہے۔ کابل افغانستان میں حکومتوں کا مرکز رہا دہلی مغل بادشاہوں اور پھر کلکتہ انگریز سرکار کی حکومت کا ہیڈ کوارٹر بنا۔یہ جرنیلی سڑک اٹھارویں صدی تک نقل و حمل اور تجارتی اعتبار سے انتہائی اہمیت اختیار کر گئی۔ جرنیلی سڑک کا گزر دو ہزار سال سے بھی زائد قدیم تہذیبی مرکز ٹیکسلا سے بھی ہوتا ہے۔ اس سڑک کے کناروں پر مسافروں کی سہولیات کی خاطر جگہ جگہ سرائے بنائے گئے اور سائے کے لیے درختوں سے سجایا گیا۔شیر شاہ سوری نے مسافروں کی آسانی کی خاطر جرنیلی سڑک پر کم و بیش ہر دو کلومیٹر کے بعد کوس مینار بنائے جو سفر کے دوران مسافروں کی رہنمائی کرتے۔ یہ کوس مینار آج بھی دہلی، کابل اور لاہور کی اس جرنیلی سڑک کے قرب و جوار میں موجود ہیں۔
لاہور کا کوس مینار جو مغلپورہ روڈ پر ریلوے لائن کے ساتھ قائم ہے.لاہور کے گنجان آباد علاقے مغل پورہ میں کراچی پھاٹک کے عقب میں کھڑا یہ قدیم کوس مینار آج بھی ماضی کی یاد تازہ کرتا ہے۔ شیر شاہ سوری کی موت کے بعد جب مغل خاندان نے ہندوستان میں حکومت قائم کی تو بھی اس جرنیلی سڑک کی اہمیت کو نظر انداز نہیں کیا گیا۔ اس جرنیلی سڑک کے ساتھ قدیم شہروں کے ساتھ ساتھ نئے شہر، نئی آبادیاں بنتی چلی گئیں۔اکبر بادشاہ اسی جرنیلی سڑک کے ذریعے حکومتی مرکز لاہور آتا اور پھر اس سڑک کے قریب اکبر بادشاہ کے دور میں ہی لاہور میں دھرم پورہ کا علاقہ آباد کیا گیا جہاں پر حضرت میاں میر بالا پیر کی دربار پر اورنگزیب عالمگیر بھی حاضری کے لیے آتے رہے ہیں۔کلکتہ پر برطانوی جھنڈا لہرانے کے بعد جب لاہور میں بھی 1849ء میں انگریزوں کی حکومت قائم ہوئی تو یہ جرنیلی سڑک فوجی آمد و رفت اور نقل و حمل کا مرکز بن گئی۔ ہندوستان پر 1857ء میں انگریزوں کے مکمل قبضے کے بعد اسی جرنیلی سڑک کے ساتھ ساتھ ریل کا وسیع تر جال بچھایا گیا۔جی ٹی روڈ پر جب بھی سفر کا اتفاق ہو تو اکثر و بیشتر مقامات پر ریلوے ٹریک بھی دیکھنے کو ملتا ہے جو سفر کے منظر کو مزید دلکش بنا دیتا ہے۔ وقت بدلتا گیا جرنیلی سڑک جو جی ٹی روڈ بن گئی اس کا روٹ تو نہیں بدلا لیکن جغرافیائی اہمیت بدل گئی۔وہ وقت گزر گیا جب کابل سے کلکتہ تک بغیر کسی سرحد کے اس روٹ کے تحت حکمران اور عوام سفر کیا کرتے تھے۔ شیر شاہ سوری کو کیا معلوم تھا کہ وہ جو سڑک تعمیر کر رہا ہے، 400 سال بعد اسی سڑک کو اس خطے کی تقسیم کے دوران تاریخ کی سب سے بڑی ہجرت کے لیے استعمال کیا جائے گا۔اب جرنیلی سڑک تین ملکوں میں تقسیم ہے۔ افغانستان، پاکستان اور ہندوستان، تینوں ملکوں کے حصے میں آنے والی یہ جرنیلی سٹرک تو موجود ہے لیکن اس کی شکل بدل گئی ہے اور اس سڑک کے ساتھ ساتھ شاہراہوں کا جدید نظام متعارف ہونے کے بعد یہاں پر آمد و رفت بھی کُچھ کم ہوگئی ہے۔لاہور سے گزرنے والی جرنیلی سڑک کا نقشہ تو اب بالکل بدل رہا ہے۔ جرنیلی سڑک پر مغل دور کی نشانی شالامار باغ، چوبرجی، مقبرہ دائی انگہ، بدھو کے مقبرے کا وجود خطرے میں ہے۔ دائی انگہ کا مقبرہ جس گلابی باغ میں موجود ہے یہ باغ اب خطرے سے دوچار ہے۔دائی انگہ سے متعلق تاریخ میں درج ہے کہ یہ شاہ جہاں دور کی مشہور دایہ تھی۔ چوبرجی چوک کا باغ زیب النساء پہلے ہی گمنامی کی تاریخ میں چلا گیا ہے۔ جرنیلی سڑک پر پنجاب کی حکومت اب لاہور میں آبادی کا دباؤ بڑھنے اور سفری سہولیات میں اضافہ کی خاطر چین کی معاونت سے 165ارب روپے کی لاگت سے میٹرو ٹرین بنا رہی ہے۔لاہور میں صرف ایک کوس مینار باقی بچا ہے، جو بمشکل اپنا وجود قائم رکھے ہوئے ہے.
شکریہ.. بحوالہ  جی ٹی روڈ تاریخ کے آئینے میں
Mussarat Hussain's photo.
Hina Collection and 5 others9 views
Comment
Share
Share
Be the first to write comment