@Mussarat3 December 2023 at 02:31
دیسی فزیوتھراپی
زیر نظر تصویر جیسے مناظر آج سے لگ بھگ پچاس پچپن برس قبل بہت کثرت سے دکھائی دیتے تھے کہ یہ اس دور کا رواج بھی تھا اور ضرورت بھی۔۔۔۔۔ روزمرہ کے معمولات زندگی سہولیات کی کمی اور جسمانی چیلنجز کی زیادتی کے باعث گھر کے مردوں اور خصوصاً بڑوں کو اس قدر تھکا دیا کرتے تھے کہ شام کو انہیں اس ٹریٹمنٹ کی ضرورت پیش آیا کرتی تھی۔۔۔۔
تب پرائیویٹ موٹر کار تو دور کی بات، فورڈ ویگن جیسی سواری بھی شاذ و نادر ہی دکھائی دیتی تھی لہذا لمبے سفر کیلئے مخصوص اوقات پہ دستیاب بس کا انتظار کیا جاتا تھا اور اسکے مقررہ وقت کے حساب سے ہی روانگی کا وقت بھی طے کیا جاتا تھا جبکہ آٹھ دس کلومیٹر جیسے مختصر سفر کیلئے بائیسکل یا گاڑی نمبر گیارہ یعنی ٹانگوں کو استعمال میں لایا جاتا تھا۔۔۔
اس پہ مستزاد یہ کہ اس سفری مشقت کے اختتام پہ نہ تو ٹھنڈا پانی دستیاب ہوتا تھا اور نہ ہی پنکھا کہ ان دونوں نعمتوں کیلئے تو بجلی کا ہونا ضروری تھا جو اس وقت دیہی آبادیوں کی رسائی میں نہیں تھی یا ابھی اکا دکا بستیوں میں پہنچ رہی تھی۔۔۔
یہ وہ زمانہ تھا کہ جب محلے کے کسی ایک آدھ گھر میں ہی ٹیلی وژن موجود ہوا کرتا تھا اور وہ بھی بلیک اینڈ وائٹ اور بیٹری پہ چلنے والا۔۔۔۔۔ چونکہ صحن کشادہ اور دل بڑے ہوا کرتے تھے تو سبھی مل جل کر ایک ہی ٹی وی سے محظوظ ہو لیا کرتے تھے اور اہل خانہ یعنی ٹی وی مالک بھی پڑوسیوں کو خوش آمدید کہنے کیلئے چشم براہ رہتے تھے۔۔۔
یہ ہمارے بچپن کا زمانہ تھا جسکی خوبصورتی اس حوالے سے لاجواب تھی کہ اس وقت تکلفات کی بجائے التفات کا دور دورہ تھا اور کم وسائل کے باوجود عزیز و اقارب اور محلہ داروں سے بہت ہی شدت کیساتھ رشتے نبھائے جاتے تھے۔۔۔ پڑوسیوں اور بالخصوص پڑوسنوں میں اس قدر دوستی ہوا کرتی تھی کہ اکثر و بیشتر ایک ساتھ بیٹھ کر سلائی کڑھائی ، سویٹر بنائی (اون اور سلائیوں سے) جیسے امور انجام دیئے جاتے تھے اور کسی ایک ہی گھر کے تندور یا تندوری پہ سبھی اپنا اپنا آٹا لا کر روٹیاں بھی بنا لیا کرتی تھیں۔۔۔
اس دور کی مائیں اور خالائیں یعنی ہمسائیاں آج بھی یاد آتی ہیں تو محبت اور احترام کی ایک بڑی لہر دل سے ابھرتی ہوئی محسوس ہوتی ہے اور ہاتھ دعا کیلئے اٹھ جاتے ہیں کہ اللہ کریم ان پیاری ہستیوں کو کروٹ کروٹ جنت نصیب فرمائے اور ہماری خوش قسمتی سے اگر ان میں سے کوئی حیات ہے تو اللہ رب العزت اسے لمبی زندگی بخشے۔
💖🙏💖
احتشام قریشی بھائی کی وال سے
Mussarat Hussain's photo.
Hina Collection and 8 others14 views
Comment
Be the first to write comment
Share
Share
Be the first to write comment