@Mussarat21 September 2023 at 04:36
ہم شہر کی دیواروں میں کھنچ آئے ہیں یارو
محسوس کیا تھا کہ اِدھر سائے ہیں یارو

رہنے بھی دو، کیا پوچھ کے زخموں کا کرو گے؟
یہ  زخم اگر  تم نے نہیں  کھائے ہیں  یارو

چھیڑو کوئی بات ایسی کہ احساس کو بدلے
ہم  آج ذرا  گھر  سے  نکل  آئے  ہیں  یارو

کیا سوچتے ہو تازہ لہو دیکھ کے سر میں؟
اک دوست  نما سنگ سے  ٹکرائے ہیں یارو

ایسے بھی نہ چُپ ہو کہ پشیمان ہو جیسے
کچھ تم نے یہ صدمے نہیں پہنچائے ہیں یارو

اندازہ تمہیں ہو گا کہ بات ایسی ہی کچھ ہے
ورنہ کبھی ہم ایسے بھی گھبرائے ہیں یارو؟

وہ قصّے جو سن لیتے تھے ہم از رہِ اخلاق
اب  اپنے یہاں  وقت نے  دہرائے  ہیں  یارو

اب تم کو سناتے ہیں کہ احساس کی تہہ سے
اک  نغمہ بہت  ڈوب کے  ہم لائے ہیں  یارو

جاتے ہیں کہ گزرا ہے یہ دن جن کی خزاں میں
آنکھوں  میں بہار اُن کے لئے لائے ہیں  یارو

(محشرؔ بدایونی)
Maa baap ki shaan and 3 others9 views
Comment
Share
Share
Be the first to write comment