@Mussarat23 March at 04:26
غزل

دعائیں، منّتّیں، روشن دِیّا قبول کرے
وہ آئے اور مِرے اشکِ وفا قبول کرے

عریضے ڈال دو دریا میں اور نیکی بھی
خبر نہیں ہے وہ کس وقت کیا قبول کرے

بُرا لگے گا ہمیں گر ہمارے ہاتھ سے پھول
ترے علاوہ کوئی دوسرا قبول کرے

وہ آئینے سے اگر مطمئن نہیں ہے تو پھر
ہماری آنکھیں بہ طور آئینہ قبول کرے

مَیں زندگی میں فقط تجھ کو دیکھ پایا ہوں
خدائے خواب مِرا دیکھنا قبول کرے

تجمل کاظمی
Chai Lover and 1 other2 views
Comment
Share
Share
Be the first to write comment