@Mussarat11 March at 04:18
ربطِ غم دِل سے مُعطّل نہیں ہونے والا
یہ ہے وہ مسئلہ جو حَل نہیں ہونے والا

آبلہ پائی ہے، ہجرت ہے، سمے بھی کم ہے
اور سفر اتنا کہ پیدل نہیں ہونے والا

مَر کے جینے کو بنا لیجیے عادت اپنی
کیوں کہ یہ "آج" کبھی "کَل" نہیں ہونے والا

اُس نے اِس درجہ مہارت سے مجھے توڑا ہے
جُڑ بھی جاؤں تو مُکمّل نہیں ہونے والا

ہم اسیرانِ وفا ہیں، ہمیں سونپو ہجراں
تم سے یہ کارِ مُسلسل نہیں ہونے والا !

اسیر ہاتف
Mussarat Hussain's photo.
Chai Lover and 1 other3 views
Comment
Share
Share
Be the first to write comment