@gulfam11 February at 08:43
تَو کیا ہوا جو آپ کے ..."شمار میں" نہیں رہا
میں مختلف سا شخص تھا __ ہزار میں نہیں رہا

فقط یہ آپ کا گلہ نہیں ہے میرے محترم
ہمارے ساتھ جو رہا __"_قرار " میں نہیں رہا

مجھے بھی عشق ہو ...دعائیں مانگتا تھا اور پھر
میں دائرے میں آ گیا  ___"قطار " میں نہیں رہا

شراب میں سرور کی تجھے سمجھ نہ آئے گی
کہ تُو کسی کی آنکھ کے خمار میں نہیں رہا

کسی کے روٹھنے سے رنگ زرد پڑ گیا مِرا
وگرنا دو گھڑی بھی میں بخار میں نہیں رہا

ستارہ ہو یا اشک ہو یہ طے شدہ سی بات ہے
وہ ٹوٹ کر گرے گا جو__" مدار" میں نہیں رہا.

نامعلوم
Mussarat Hussain and 2 others4 views
Comment
Share
Share
Be the first to write comment